بسم اللہ الرحمن الرحیم

قومی

عدالت نے تینوں ٹک ٹاکرز بھائی رہا کرنے کا حکم دیدیا

ٹک ٹاک بنا کر نظر بند ہونے والے 3 بھائیوں سمیت 4 افراد کے کیس کی سماعت جسٹس انوار الحق پنوں کی عدالت میں ہوئی

لاہور ہائی کورٹ ملتان بینچ نے ٹک ٹاک ویڈیو بنانے پرگرفتار ہونے والے تین بھائیوں سمیت 4 افراد کو رہا کرنے کا حکم دے دیا۔

ہائی کورٹ ملتان بینچ میں ٹک ٹاک بنا کر نظر بند ہونے والے 3 بھائیوں سمیت 4 افراد کے کیس کی سماعت جسٹس انوار الحق پنوں کی عدالت میں ہوئی ۔

وکیل رانا جاوید اقبال نے چاروں ٹک ٹاکرز کی رہائی کے لیے دلائل پیش کیے ، وکیل صفائی نے کہا کہ ڈپٹی کمشنر ملتان علی شہزاد نے چاروں ٹک ٹاکرز کے خلاف غیر قانونی اقدام اٹھایا اور 15 جولائی کو ٹک ٹاکر بھائیوں محمد طارق ، محمد اصغر ، محمد عارف اور ان کے رشتہ دار محمد ذیشان کی نظر بندی کے احکامات جاری کر کے انہیں نظر بند کر دیا۔

رانا جاوید اقبال کے مطابق چاروں ٹک ٹاکرز کی کسی ویڈیو سے دہشت نہیں پھیلی اور نہ ہی کسی ویڈیو میں اسلحے کا استعمال کیا گیا ، ویڈیو میں اسلحہ استعمال نہ کرنے اور دہشت پھیلانا ثابت نہ ہونے پر جسٹس انوار الحق پنوں نے تمام ٹک ٹاکرز کی رہائی کے احکامات جاری کر دیے ۔

خیال رہے کہ 4 روز قبل ڈپٹی کمشنر نے ٹک ٹاک ویڈیو بنا کر دہشت پھیلانےکے الزام میں چاروں ٹک ٹاکرز کو 1 ماہ کے لیے نظر بند کردیا تھا۔

یہ بھی پڑھیے

Back to top button