بسم اللہ الرحمن الرحیم

قومی

فافن نے ڈسکہ این اے 75 کے انتخاب کودھاندلی سے پاک قرار دیدیا

تحریک انصاف کی جانب سے ڈسکہ انتخابات میں آر او آفیسر کی جانبداری کے الزامات مسترد کر دیے گئے۔ تفصیلات کے مطابق فافن نے ڈسکہ انتخابات کے حوالے سے اپنی رپورٹ جاری کر دی ہے، جس میں بتایا گیا ہے کہ این اے 75 ڈسکہ انتخابات میں دھاندلی کے کوئی ثبوت نہیں ملے۔ فافن کے رپورٹ میں ڈسکہ انتخابات کو مکمل طور پر شفاف قرار دیاگیا۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ انتخابات کے دوران الیکشن عملے نے اپنی ذمہ داری پوری توجہ سے سر انجام دی۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ پنجاب سے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 75 ڈسکہ ضمنی انتخاب پر فری اینڈ فیئر الیکشن نیٹ ورک (فافن) نے رپورٹ جاری کردی۔فافن رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ فافن عملے نے الیکشن میں 193 انتخابی خلاف ورزیوں کی نشاندہی کی جن میں 115 پارٹی کیمپ کی پولنگ اسٹیشن کے باہر ہونے سے متعلق تھیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ 38 واقعات الیکشن عملے کے ایک کمرے میں ایک الیکشن بوتھ سے زیادہ قائم کرنے سے متعلق ہیں جبکہ 91 فیصد پولنگ اسٹیشن کے باہر ووٹرز نے اطمینان کا اظہار کیا۔فافن رپورٹ کے مطابق الیکشن کمیشن نے سیکیورٹی کے مو¿ثر انتظامات کیے، تشدد کے بڑے واقعات رپورٹ نہیں ہوئے تاہم کورونا کے حوالے سے 46 فیصد پولنگ اسٹیشنز پر ایس او پیز پر عملدرآمد ناقص تھا جبکہ 3فیصد پولنگ اسٹیشنز پر کورونا ایس او پیز پر عملدرآمد ہی نہیں کیا گیا۔

فافن رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ووٹر کیلئے کسی اور کی جانب سے مہر لگانے کا ایک واقعہ بھی سامنے آیا، پولنگ ایجنٹس کو فارم 45 کی کاپیاں فراہم کی گئیں۔رپورٹ کے مطابق الیکشن میں 43 فیصد ووٹرز نے حق رائے دہی استعمال کیا، حلقے میں خواتین کے ووٹ کی رجسٹریشن مردوں سے زیادہ رہی جبکہ حلقے میں 2018 کے انتخابات سے خواتین ووٹرز میں تقریباً 22 ہزار ووٹ کا اضافہ ہوا اور حلقے میں مرد ووٹرز میں 19 ہزار کا اضافہ ہوا۔خیال رہے کہ قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 75 ڈسکہ کے ضمنی انتخاب میں مسلم لیگ (ن) کی نوشین افتخار نے کامیابی حاصل کی۔

یہ بھی پڑھیے

Back to top button