بسم اللہ الرحمن الرحیم

قومی

کسی کو بھی توقع نہیں تھی کہ او آئی سی اور عرب لیگ عملی طور پر فعال ہوجائے گی،شاہ محمود قریشی

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اب فلسطین کے مسئلے کو نظرانداز کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہے

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے زور دے کر کہا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اب فلسطین کے مسئلے کو نظرانداز کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہے اور اس کو فیصلہ لینا پڑے گا فلسطین کے مسئلے پر اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 193 رکنی ہنگامی اجلاس کے بعد ترک نشریاتی ادارے سے انٹرویو میں شاہ محمود قریشی نے کہا کہ فلسطین پر اسرائیل کی جارحیت کا حالیہ واقعات نے ان لوگوں کو جھنجھوڑ دیا جو باہر بیٹھے ہیں انہوں نے کہا کہ دنیا بھر میں اسرائیلی حملوں پر ردعمل کی توقع نہیں تھی.

انہوں نے کہا کہ کسی کو بھی توقع نہیں تھی کہ او آئی سی اور عرب لیگ عملی طور پر فعال ہوجائے گی، نان الائن موومنٹ متحرک ہوجائے گی اور اس کے نتیجے میں جنرل اسمبلی کا خصوصی ہنگامی اجلاس ہوگا شاہ محمود قریشی نے اسے ایک بے مثال سیشن قرار دیا انہوں نے زور دے کر کہا کہ سلامتی کونسل سیشن کو ایک واضح پیغام بھیجے گا کہ بہت ہوگیا ہے اور جو لوگ بنیادی حقوق پر یقین رکھتے ہیں انہیں ضرور آواز بلند کرنی چاہیے وہ اب ایک طرف ہو کر نہیں بیٹھ سکتے.

جنرل اسمبلی اوراقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی جانب سے اٹھائے جانے والے اقدامات سے متعلق سوال کے جواب میں شاہ محمود قریشی نے کہا کہ انہیں سب سے پہلے جنگ بندی کرانے کی ضرورت ہے وزیر خارجہ نے کہا کہ ان کا اقوام متحدہ کی جنرل کونسل کے اجلاس میں شرکت کا ایک نکاتی ایجنڈا تھا جو جنگ بندی کی ضرورت پر زور دینا تھا. انہوں نے کہا کہ جب اس ایجنڈے میں کامیابی ملے گی تو تمام دیگر مراحل بھی حل ہوجائیں گے شاہ محمود قریشی نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ او آئی سی رکن ممالک کے وزرائے خارجہ جو اس دن نیویارک میں موجود تھے وہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے صدر سے ملاقات کریں گے اور انہیں بین الاقوامی تحفظ فورس جیسی کوئی فورس تشکیل دینے کی تجویز پیش کریں گے.

وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم اس خیال کو آگے بڑھائیں گے اور جنرل اسمبلی کے صدر کے ساتھ اس کے طریقہ کار پر تبادلہ خیال کریں گے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ امریکا وہ واحد ملک ہے جس کی اسرائیل سنے گا. وزیر خارجہ نے کہا کہ امریکا کا اسرائیل پر اثر و رسوخ ہے اور اسے اسرائیل کو راضی کرنے میں زیادہ فعال کردار ادا کرنا چاہیے کہ جو کچھ وہ کررہا ہے وہ دنیا کو قبول نہیں ہے ایک اور سوال کے جواب میں شاہ محمود قریشی نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر اور فلسطین میں لوگ حق خودارادیت کا مطالبہ کر رہے ہیںانہوں نے کہا کہ کشمیر میں لوگ آبادیاتی تنظیم نو کے بارے میں رو رہے ہیں اور فلسطینی بھی آبادیاتی تنظیم نو سے خوفزدہ ہیں اور جب کشمیری اور فلسطینی عوام نسلی قتل و غارت سے پریشان ہیںشاہ محمود قریشی نے کہا کہ فلسطین سلامتی کونسل کے ایجنڈے میں فلسطین اور کشمیر کا مسئلہ بہت پرانا ہے آپ ان میں مماثلت دیکھ سکتے ہیں.

یہ بھی پڑھیے

Back to top button